اسرائیل نے غزہ کے قریب ٹینک جمع کیے، فوجی سربراہ نے ‘جنگ کا وقت’ قرار دے دیا

[ad_1]

غزہ کے جبالیہ کیمپ میں اسرائیلی فضائی حملے سے متاثرہ عمارتوں کے ملبے کا ایک منظر۔  الجزیرہ
غزہ کے جبالیہ کیمپ میں اسرائیلی فضائی حملے سے متاثرہ عمارتوں کے ملبے کا ایک منظر۔ الجزیرہ

اسرائیل کے فوجی سربراہ، لیفٹیننٹ جنرل ہرزی حلوی نے فلسطینی گروپ حماس کے مہلک حملوں کے جواب میں اعلان کیا ہے کہ "اب جنگ کا وقت ہے”۔

تنازعہ مزید گہرا ہو گیا ہے کیونکہ اسرائیل نے حماس کے حملوں میں اضافہ دیکھا، جو اس کی تاریخ کے سب سے مہلک حملے پر منتج ہوا۔ عوامی نشریاتی ادارے کان نے اسرائیلی ہلاکتوں کی تعداد 1,300 سے زیادہ بتانے کے بعد، صورتحال تیزی سے سنگین ہو گئی ہے۔

اسرائیل کے فوجی سربراہ نے غزہ کے ارد گرد سیکورٹی کی خرابیوں سے سیکھنے کی اہمیت پر زور دیا جس نے حالیہ حملے میں سہولت فراہم کی۔ انہوں نے کہا، "ہم ان غلطیوں سے سیکھنے کے لیے پرعزم ہیں، مکمل تحقیقات کر رہے ہیں، لیکن اس وقت، ہم جنگ میں شامل ہونے کے لیے پرعزم ہیں۔”

حماس کے حملوں کے نتیجے میں اسرائیلی اور غیر ملکی یرغمالیوں کو غزہ واپس لے جایا گیا، اسرائیل نے ان میں سے 97 کی شناخت کی۔ اس کے جواب میں اسرائیل نے غزہ کا محاصرہ کر کے مسلسل بمباری کی مہم شروع کر دی ہے جس سے علاقے میں بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی ہے۔

غزہ حکام کے مطابق 1500 سے زائد فلسطینی اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔

اس تنازعے نے غزہ کے اہم بنیادی ڈھانچے کو بھی نقصان پہنچایا ہے۔ انٹرنیشنل کمیٹی آف ریڈ کراس (آئی سی آر سی) نے خبردار کیا ہے کہ غزہ کے ہسپتالوں میں ایمرجنسی جنریٹروں کا ایندھن چند گھنٹوں میں ختم ہو سکتا ہے، جبکہ اقوام متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام (ڈبلیو ایف پی) نے خطے میں خوراک اور میٹھے پانی کی شدید قلت کو اجاگر کیا۔

بین الاقوامی فوجداری عدالت (آئی سی سی) نے غزہ کی پٹی میں حماس اور اسرائیل دونوں کی طرف سے ممکنہ جنگی جرائم کے دائرہ اختیار پر زور دیا ہے، جس سے ان واقعات کی ممکنہ تحقیقات کے بارے میں خدشات پیدا ہوئے ہیں۔

اسرائیل کی حکومت نے اپنے اقدامات کے لیے بین الاقوامی حمایت حاصل کرنے کی کوشش میں، حماس کے ہاتھوں مبینہ طور پر ہفتے کے آخر میں ہونے والے ہنگامے میں ہلاک ہونے والے بچوں اور شہریوں کی تصویری تصاویر پیش کیں۔

امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن نے صدمے کے ساتھ رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے ان تصاویر کو "بدترین تصوراتی انداز میں محض خرابی” قرار دیا۔

جیسے جیسے بحران گہرا ہوتا جا رہا ہے، اسرائیلی فوجی سربراہ کی طرف سے جنگ کا مطالبہ اور حماس کو ختم کرنے کے لیے ایک منصوبہ بند زمینی حملہ بحث کا مرکزی نقطہ بن گیا ہے۔ اس کے جواب میں امریکی وزیر دفاع لائیڈ آسٹن نے کہا ہے کہ امریکا اسرائیل کو اپنی سیکیورٹی امداد پر کوئی شرط نہیں لگاتا، اس توقع کا اظہار کرتے ہوئے کہ اسرائیل حماس کے خلاف اپنی جنگ کے لیے "صحیح کام” کرے گا۔

تنازعہ نے بین الاقوامی خدشات اور حفاظتی اقدامات کو بھی جنم دیا ہے۔ یورپ میں، شہری بدامنی پھوٹ پڑی ہے، پیرس میں پولیس نے فلسطینی عوام کی حمایت میں ایک ممنوعہ ریلی کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس اور پانی کی توپوں کا استعمال کیا۔ مزید برآں، ایمسٹرڈیم اور لندن میں یہودی اسکولوں کو حفاظتی خدشات کی وجہ سے عارضی طور پر بند کر دیا گیا ہے۔

صورتحال انتہائی ناگفتہ بہ ہے، دنیا بھر میں بہت سے لوگ تحمل کی تاکید کرتے ہیں لیکن مزید جانی نقصان اور مصائب کو روکنے کے لیے حل کی اشد ضرورت کو بھی تسلیم کرتے ہیں۔

[ad_2]

Source link


Posted

in

by

Comments

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے