روپیہ ‘ستمبر میں عالمی سطح پر ٹاپ پرفارمر بننے کا امکان’

[ad_1]

ایک کرنسی ایکسچینج ڈیلر اس غیر تاریخ شدہ تصویر میں 1000 روپے کے نوٹ گن رہا ہے۔  — اے ایف پی/فائل
ایک کرنسی ایکسچینج ڈیلر اس غیر تاریخ شدہ تصویر میں 1000 روپے کے نوٹ گن رہا ہے۔ — اے ایف پی/فائل

جیسا کہ عبوری حکومت ڈالر کی غیر قانونی تجارت کے خلاف اپنا کریک ڈاؤن تیز کر رہی ہے، اس بات کا امکان ہے کہ پاکستانی روپیہ ستمبر میں عالمی سطح پر سرفہرست ہو جائے گا، بلومبرگ، اطلاع دی

مقامی کرنسی میں اس ماہ ڈالر کے مقابلے میں تقریباً 6 فیصد اضافہ ہوا – تھائی بھات اور جنوبی کوریا کی جیت کے باوجود گرین بیک کے مقابلے میں ایک حیرت انگیز کارنامہ۔

بڑی کرنسیوں نے ڈالر کے مقابلے میں ان قیاس آرائیوں پر گرا دیا کہ امریکی شرح سود زیادہ دیر تک بلند رہے گی۔

جمعرات کو روپیہ 0.1% بڑھ کر 287.95 فی ڈالر ہو گیا، اس ماہ تقریباً 307 کی ریکارڈ کم ترین سطح پر جانے کے بعد۔ پاکستان کی کرنسی مارکیٹ جمعہ کو عید میلاد النبی کی تعطیل کے لیے بند رہے گی۔

الفا بیٹا کور سلوشنز پرائیویٹ لمیٹڈ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر خرم شہزاد نے پبلیکیشن کو بتایا کہ "اوپن مارکیٹ سے حوالات اور ہنڈی کی تجارت کے غیر قانونی چینلز کے ذریعے بہت ساری لیکیجز ہو رہی تھیں۔”

شہزاد نے کہا، "جب ڈالر کا ریٹ ہر کسی کو تبدیل کر دیتا ہے، تو ذخیرہ اندوز، برآمد کنندگان جو اپنی برآمدی آمدنی روکے ہوئے ہیں، اپنے ڈالر بیچنا شروع کر دیتے ہیں۔”

عبوری حکمرانوں نے ڈالر کی غیر قانونی تجارت میں ملوث لوگوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر کے کوششیں تیز کر دی ہیں، جس سے کرنسی کو کچھ کھوئی ہوئی زمین حاصل ہو سکتی ہے۔

وفاقی تحقیقاتی ایجنسی، بلومبرگ رپورٹ کے مطابق، ملک بھر میں چھاپے مارے گئے اور کریک ڈاؤن کے ایک حصے کے طور پر ڈالر کی فروخت پر نظر رکھنے کے لیے سادہ کپڑوں میں سیکیورٹی اہلکاروں کو منی ایکسچینجز میں تعینات کیا گیا۔

نگراں وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ نے اس ہفتے کہا کہ روپے کی قدر میں اضافہ "استحکام کے لیے امید کو فروغ دے رہا ہے۔”

اپنی طرف سے، اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے چھوٹی ایکسچینج کمپنیوں کے سرمائے کی ضروریات میں اضافہ کیا اور بڑے بینکوں کو حکم دیا کہ وہ اپنی ایکسچینج کمپنیاں کھولیں تاکہ خوردہ زرمبادلہ کی مارکیٹ کو زیادہ شفاف اور آسانی سے مانیٹر کیا جا سکے۔

[ad_2]

Source link


Posted

in

by

Comments

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے