غزہ میں 338,000 سے زائد فلسطینی بے گھر ہوئے: اقوام متحدہ کا ادارہ

[ad_1]

10 اکتوبر 2023 کو غزہ شہر پر اسرائیلی فضائی حملوں کے بعد فلسطینی تباہ شدہ سڑک سے گزر رہے ہیں۔ اے ایف پی/فائل
10 اکتوبر 2023 کو غزہ شہر پر اسرائیلی فضائی حملوں کے بعد فلسطینی تباہ شدہ سڑک سے گزر رہے ہیں۔ اے ایف پی/فائل

غزہ: اقوام متحدہ نے اسرائیل اور حماس کے درمیان جاری تنازع پر ایک افسوسناک رپورٹ جاری کی ہے، جس میں انکشاف کیا گیا ہے کہ غزہ کی پٹی میں 338,000 سے زائد افراد اپنا گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہوئے ہیں۔

اقوام متحدہ کے انسانی ہمدردی کے ادارے، او سی ایچ اے نے اس صورتحال کو "بڑے پیمانے پر نقل مکانی” قرار دیا ہے کیونکہ اسرائیل کی بھاری بمباری گنجان آبادی والے فلسطینی انکلیو کو مسلسل نشانہ بنا رہی ہے۔

یہ بحران اس وقت مزید گہرا ہو گیا جب اسرائیل نے عسکریت پسندوں کے ہفتے کے روز کیے گئے اچانک حملے کے جواب میں حماس کے ٹھکانوں پر اپنے حملے تیز کر دیے۔ اسرائیلی فورسز نے اطلاع دی ہے کہ تقریباً 1,200 افراد، جن میں زیادہ تر عام شہری ہیں، اس تباہ کن حملے کے دوران المناک طور پر اپنی جانیں گنوا چکے ہیں، جو اسے ملکی تاریخ کے سب سے شدید حملوں میں سے ایک قرار دیتے ہیں۔

غزہ میں، حکام نے اسرائیل کے فضائی اور توپ خانے کے حملوں کی مسلسل مہم کی وجہ سے 1,000 سے زیادہ ہلاکتوں کی اطلاع دی۔

OCHA کے بیان میں روشنی ڈالی گئی ہے کہ تقریباً 220,000 بے گھر افراد، جو کہ کل کا دو تہائی ہیں، نے اقوام متحدہ کے ادارے جو فلسطینی پناہ گزینوں کی مدد کرتی ہے، UNRWA کے زیر انتظام اسکولوں میں پناہ لی ہے۔

دریں اثنا، تقریباً 15,000 افراد نے فلسطینی اتھارٹی کے زیر انتظام اسکولوں میں پناہ حاصل کی ہے، اور 100,000 سے زیادہ کو غزہ شہر کے اندر رشتہ داروں، پڑوسیوں اور دیگر سہولیات کے ذریعے پناہ دی گئی ہے۔

رپورٹ میں یہ بھی انکشاف کیا گیا ہے کہ ہفتہ کے حملے سے قبل ہی غزہ کی پٹی کے اندر تقریباً 3000 افراد بے گھر ہو چکے تھے، جو اس علاقے میں دیرینہ بحران کی عکاسی کرتا ہے۔

بمباری نے غزہ کے ہاؤسنگ انفراسٹرکچر کو بڑے پیمانے پر نقصان پہنچایا ہے، کم از کم 2,540 ہاؤسنگ یونٹس ناقابل رہائش ہیں۔ مزید برآں، مزید 22,850 ہاؤسنگ یونٹس کو معمولی سے معمولی نقصان کا سامنا کرنا پڑا۔

مزید برآں، اقوام متحدہ کی ایجنسی نے فضائی حملوں کے نتیجے میں شہری بنیادی ڈھانچے کی کافی تباہی پر تشویش کا اظہار کیا، جس میں سیوریج کی سہولیات بھی شامل ہیں جو کہ دس لاکھ سے زیادہ لوگوں کو خدمات فراہم کرتی ہیں۔

سیوریج کی تباہ شدہ سہولیات کی وجہ سے گلیوں میں ٹھوس فضلہ جمع ہو گیا ہے جس سے آبادی کے لیے صحت کو شدید خطرہ لاحق ہو گیا ہے۔

[ad_2]

Source link


Posted

in

by

Comments

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے