پاکستان مسئلہ فلسطین کے دو ریاستی حل کی حمایت کرتا ہے، وزیراعظم کاکڑ

[ad_1]

نگران وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ 31 اگست 2023 کو اسلام آباد میں وزیر اعظم ہاؤس میں ہونے والی ملاقات میں اینکرز اور صحافیوں سے گفتگو کر رہے ہیں۔ - PID
نگران وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ 31 اگست 2023 کو اسلام آباد میں وزیر اعظم ہاؤس میں ہونے والی ملاقات میں اینکرز اور صحافیوں سے گفتگو کر رہے ہیں۔ – PID

نگراں وزیر اعظم انوار الحق نے پیر کے روز کہا کہ مسئلہ فلسطین کا ان کی خواہشات کے مطابق حل مشرق وسطیٰ میں قیام امن کے لیے ناگزیر ہے کیونکہ اسرائیل اس وقت حماس کے زیر کنٹرول غزہ کی پٹی کے خلاف اقدامات کو "مکمل ناکہ بندی” تک بڑھا رہا ہے۔

زمینی حملے کے خدشات بڑھتے جا رہے ہیں کیونکہ اسرائیل نے غزہ کی پٹی پر مکمل محاصرہ کر رکھا ہے، علاقے کو پانی کی سپلائی منقطع کر دی ہے، اس کے علاوہ رہائشی علاقوں اور عوامی عمارتوں کو نشانہ بنانے والے فضائی حملے بھی جاری ہیں۔

اسرائیل کی وزارت خارجہ نے دعویٰ کیا ہے کہ غزہ کی پٹی میں محصور رہائشی علاقوں پر اسرائیلی جیٹ طیاروں کی فضائی بمباری میں 570 فلسطینی شہید ہوچکے ہیں جب کہ حماس کی جانب سے ہفتے کے روز کیے گئے حیران کن بڑے پیمانے پر حملے میں مرنے والوں کی تعداد اسرائیل کی جانب سے 1000 کے قریب پہنچ گئی ہے۔

دریں اثناء، الجزیرہ نے رپورٹ کیا کہ حماس کی قسام بریگیڈ نے کہا ہے کہ وہ اسرائیلی شہریوں کو یرغمال بنانا شروع کر دیں گے اور اگر اسرائیل نے بغیر کسی پیشگی انتباہ کے شہری رہائشی علاقوں پر ایک اور بم گرایا تو وہ پھانسی کو براہ راست نشر کریں گے۔

آج (پیر) پی ٹی وی پر ایک انٹرویو میں وزیر اعظم کاکڑ نے واضح کیا کہ پاکستان مسئلہ فلسطین پر بہت واضح موقف رکھتا ہے اور فلسطینی عوام کی امنگوں کے مطابق دو ریاستی حل کی حمایت کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ مشرق وسطیٰ کے خطے میں امن کے لیے اس مسئلے کا حل ناگزیر ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ اسرائیل دو ریاستی حل سے انکار کر رہا ہے، جس کے نتیجے میں موجودہ صورتحال مزید پیچیدہ ہو رہی ہے۔

ایک اور سوال کے جواب میں پی ایم کاکڑ نے کہا کہ آزادی اظہار کی آڑ میں غلط معلومات پھیلانا انتہائی قابل مذمت ہے۔

اقتصادی بحالی کا منصوبہ

ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے ملکی استحکام کے لیے پالیسیوں کے تسلسل اور اقتصادی بحالی کے منصوبے کی ضرورت پر زور دیا اور امید ظاہر کی کہ سیاسی جماعتیں اس حوالے سے اتفاق رائے پر پہنچ جائیں گی۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان ایک کامیابی کی داستان ہے کیونکہ دہشت گرد پاکستان کی سرزمین کے ایک انچ پر بھی قبضہ نہیں کر سکتے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ملک کی انسداد بغاوت کی پالیسیاں بہت کامیاب رہی ہیں اور غیرمتزلزل عزم کے ساتھ سکیورٹی فورسز دہشت گردی کی لعنت کو ختم کر دیں گی۔

وزیر اعظم کاکڑ نے اس بات پر زور دیا کہ ملک کے فوجی اداروں کی طرح سویلین اداروں کو بھی مضبوط کیا جانا چاہیے۔

آئندہ عام انتخابات کی طرف بڑھتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کو انتخابات کی تاریخ کا اعلان کرنے کا مینڈیٹ حاصل ہے، انہوں نے مزید کہا کہ اپنی آئینی وابستگی کے مطابق نگران حکومت آزادانہ، منصفانہ انعقاد میں ای سی پی کی مدد کرے گی۔ اور غیر جانبدارانہ انتخابات۔

انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ نگران حکومت خدمات کی فراہمی کے طریقہ کار کو بہتر بنانے کے لیے اقدامات کرے گی اور منتخب حکومتوں کے لیے ایک ماڈل قائم کرے گی۔

[ad_2]

Source link

Comments

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے